ایسے خفیہ مقامات جو گوگل ارتھ پر بھی نظر نہیں آتے

آپ گوگل ارتھ پر بہت مزے سے دنیا بھر کے نقشے اور تصاویر دیکھتے ہیں۔اصل میں یہ تمام نقشے خلائی سیٹیلائیٹ سے بنائی جاتی ہیں اور ہمیں یہ علم ہوتا رہتا ہے کہ فلاں جگہ کیا چیز ہے یا فلاں جگہ کیسی ہے۔ لیکن دنیا میں کچھ مقامات ایسے بھی ہیں جو گوگل آپ کو نہیں دکھاتا جس کی مختلف وجوہات ہیں جیسے سیکیورٹی اور اس ملک کی درخواست جہاں یہ مقامات واقع ہیں۔آئیے آپ کو کچھ ایسے ہی مقامات کے بارے میں بتاتے ہیں۔
سیورنایا زیملیا،روس
اگر آپ روس میں واقع بحر منجمد شمالی کو دیکھیں تو آپ کو کبھی بھی یہ علاقہ واضح نظر نہیں آئے گا بلکہ اس پر برف نظر آئے گی۔حقیقت میں یہ برف نہیں ہے بلکہ گوگل نے یہ علاقہ لوگوں کی نظروں سے چھپا رکھا ہے۔
تائیوان کے فوجی تنصیبات
سیکیورٹی وجوہات کی وجہ سے تائیوان کی حکومت نے گوگل سےدرخواست کی تھی کہ ان کی تنصیبات کو گوگل ارتھ پر نہ دکھایا جائے ۔اس طرح ان کے دشمنوں کو فائدہ ہو سکتا ہے۔
امریکہ اور میکسیکو کا بارڈر
یہ علاقہ امریکہ اور میکسیکو کے درمیان انسانی اور منشیات کی سمگلنگ کی وجہ سے بہت مشہور ہے اور جرائم پیشہ عناصر اس کے بہت زیادہ استعمال کرتے ہیں لہذا اس علاقے کو گوگل نے دھندلا دیا ہے تا کہ سمگلرز کو کوئی مدد نہ مل سکے۔
مارکولی نیوکلئیر پلانٹ،فرانس
اس پلانٹ میں یورینیم اور پلوٹینیم کا ذخیرہ ہے جبکہ ماضی میں یہاں نیوکلیائی پلانٹ بھی تھا۔سیکیورٹی وجوہات کی بناءپر فرانس نے اس علاقے کو گوگل سے درخواست کے بعد دھندلا دیا ہے۔
وولکل ائیر بیس، نیدر لینڈز
ہالینڈ میں فوجی سرگرمیاں اکثر مشکوک رہی ہیں اور کہا جاتا ہے کہ اس ائیر بیس میں 22نیوکلیائی ہتھیار رکھے گئے ہیں۔کہا جاتا ہے کہ یہ بم ہیروشیما اور ناگا ساکی پر گرائے گئے بموں سے چار گنا زیادہ طاقتور ہیں۔
پورٹ لاوﺅز جیل، آئرلینڈ
اس جیل میں آئر لینڈ کے خطرناک ترین قیدی رکھے گئے ہیں لہذااس کی حفاظت کیلئےہر وقت فوجی دستے گشت کرتے رہتے ہیں جبکہ کسی بھی طرح کے جہاز کو یہاں آنے کی پابندی ہے۔جبکہ گوگل ارتھ پر دکھائی جانے والی تصاویر دس سال پرانی ہیں۔
میشائل اے اے ایف بلڈنگ،یوٹا،امریکا
اس عمارت کے گرد 48مربع کلومیٹر تک صحرا ہے ۔یہ علاقہ دوسری جنگ عظیم میں نیوکلیائی اور کیمیائی ہتھیاروں کو جانچنے کیلئے استعمال کیا جاتا تھا۔کہا جاتا ہے کہ اب بھی یہاں کچھ ایسی سرگرمیاں کی جاتی ہیں جس کی وجہ سے اس علاقے کو گوگل ارتھ پر دھندلا دیا گیا ہے۔
ایل اجیڈو، جنوبی اسپین
جنوبی سپین کے علاقے’ایل اجیڈو’ کو سفید کرکے بالکل دھندلا دیا گیا ہے۔کہا جاتا ہے کہ یہاں سپین اپنی فوجی سرگرمیاں سرانجام دیتا ہے جس کی وجہ سے اسے نہیں دکھایا جاتا۔
ہارپ،اٹلانٹا
امریکی تحقیقاتی ادارے میں 180موسمیاتی انٹیناءلگائے گئے ہیں ۔اس ادارے کے بارے میں افواہیں ہیں کہ یہاں سے بیٹھ کردنیا کے لوگوں کے دماغ کو کنٹرول کرنے کی منصوبہ بندی کی جاتی ہے۔یہ بھی کہا جاتا ہے کہ پاکستان میں 2010ءکے سیلاب بھی یہاں سے بیٹھے موسمیاتی کنٹرول کے ذریعے لائے گئے۔
بشکریہ ہفنگٹن پوسٹ

Comments

comments

اپنا تبصرہ بھیجیں