ملک محبت کے قوانین

محبت جیت جاتی ہے۔۔۔۔۔۔خود کو منوا لیتی ہے۔۔۔۔۔اصولوں کے بندے،لکیر کے فقیر،راویات کے قیدی،ظالم، جابر سبھی غاضب ہار جاتے ہیں۔۔۔۔۔۔محبت اپنے شجرِ مقصود کی خون سے آبیاری کرتی ہے۔۔۔۔۔۔۔محبت دلجمعی استقامت و مداومت ہمت و عزیمت سے بھی آگے کسی بے نام جذبے کی غماض ہوتی ہے۔۔۔آنکھوں ہی آنکھوں میں لکھی وہ تحریر ہوتی ہے جس کا وجود و ظہور نہیں ہوتا مگر مفہوم ہوتا ہے۔۔۔۔یہ کبھی کبھی مُکر جاتی ہے اورکبھی ہر بات پہ اڑ جاتی ہے۔۔۔۔۔۔۔مفہوم ِ محبت کے پیمانے ظروف کی تطبیق کے محتاج ہوتے ہیں۔۔۔۔۔۔۔اس بے صلہ تجارت کا عوض لوگ محبوب کو سمجھتے ہیں لیکن در حقیقت اس کا اجر خود عاشق کی ذات ہوتی ہے۔۔۔۔۔۔تمام عمر جس مطلوب کے لیے آہیں بھری جاتی ہیں ایک مقام ایسا بھی آتا ہے کہ وہ مطلوب ضمناً رہ جاتا ہے اور خود عاشق مطلوب ہو جاتا ہے۔۔۔۔خدائی رازوں میں سے یہ ایک ایسا راز ہے کہ جس کا بھید جتنا کھولو اتنا پیچیدہ۔۔۔۔۔عقدہ کشائی کی سب سبیلیں دراصل مزید بھول بھلیوں کی راہداریاں ثابت ہوتی ہیں۔۔۔۔ہاتھ پاؤں مارو تو مزید ڈوبو۔۔۔۔۔بے حرکت رہو تو خودکشی ہو۔۔۔۔۔۔۔اصول و ضوابط ۔۔۔۔قوانین و تعزیرات۔۔۔۔حدود و قیودہویا پھر۔۔۔۔ اختیاراتِ لا محدود کی تفویض ۔۔۔یا۔۔۔ خلافت ِ ارضی کی نوید ۔۔۔ یا جنت نکالا۔۔۔۔سبھی کے لیے ایک ہی قانون ” ملک محبت میں قوانین حسب ِ موقع بنائے جاتے ہیں اور بقدر طبعیت ان کا اطلاق ہوتا ہے۔ ”

تحریر: محمد مدثر

فیس بک آئی ڈی

Comments

comments

اپنا تبصرہ بھیجیں