نیکی کا بدلہ…. موت (در صدف ایمان)

میرے کپڑے نکال دو بیٹا مجھے نمازِ جنازہ میں شرکت کرنی ہے….
کس کا انتقال ہوا ابو جی؟ سدرہ نے چونک کے استفسار کیا….
اگلی گلی میں جو عبد الصمد بھائی رہتے ہیں ان کے بیٹے کا انتقال ہوگیا ہے ان پر کل رات تشدد ہوا تھا….
زخم گہرے آئے تھے جانبر نہیں ہوسکے انتقال کر گئے….. الله مغفرت فرمائے……
تشدد لیکن کیوں؟؟؟ وہ تو اچھے انسان تھے نہ ان کی کسی تنظیم سے وابستگی تھی… حتی الامکان سب کی مدد کرتے تھے… تو کس نے کیا تشدد؟؟؟
ان کی مدد کی وجہ ہی ان کی موت کا سبب بنی ہے بیٹا… واپسی پر بتاؤں گا بس دعا کرو اللہ ان کے لیے آگے کی منزلیں آراستہ فرمائے….
ابو جی یہ کہتے ہوئے باتھ روم کی جانب چلے گئے….
لیکن تشدد کی وجہ جاننے کے لیے مجھے ابو جی کی واپسی کا انتظار نہیں کرنا پڑا…..
اسی وقت اسی گلی سے جو پریپ ون اور ٹو کے بچے میرے پاس پڑھنے آتے تھے ان کی والدہ حسب ِ معمول انھیں چھوڑنے آئی تو بتایا کہ دیر کا سبب یہ تھا محلے میں انتقال ہوگیا
اور بتاتی ہی چلی گئیں
بے چاروں پر کتنا ظلم ہوا چار بچے ہیں …بے چاری کیا کریں گی اب…..
پر کیا ہوا تھا اور کس نے کیا یہ سب….؟؟؟
بس نیکی کا زمانہ ہی نہیں رہا بے چارے کو اس کی نیکی گلے پڑگئ…. کل جارہا ہوگا کہیں ، کسی کی گاڑی سے کسی لڑکے ایکسیڈنٹ ہوگیا تھا… وہ بے چارہ تو مدد کے خیال سے ہسپتال لے گیا بروقت…. لیکن جب لڑکے کے گھر والے پہنچے تو اس کے لڑکے کے بھائیوں نے بنا کچھ سوچے سمجھے اورسنے بغیر ہی مارنا شروع کردیا…..
بس وہاں سے تو کسی طرح لوگوں نے چھڑاوا دیا لیکن وہ اس مار کی تاب نہ لاسکا، کل پوری رات موت سے لڑتا رہا آج ظہر کے وقت انتقال ہوگیا….
وہ تو پوری بات بتا کر چلی گئیں لیکن میں یہ سوچتی رہ گئ…..
کیا اب لوگوں میں بھلائی کا جذبہ ختم ہوگیا ہے یا واقعی ہم سب کو مدد جیسے جذبے سے انجان ہوجانا چاہیے……؟؟؟
یہی نہیں پچھلے ہفتے ہم گھر والے چاچو کے گھر دعوت پر گئے… میرے بھائی جس کا کچھ ماہ قبل ایکسیڈنٹ ہوا تھا… وہ بعد میں پہنچا اور بتایا کہ راستے میں ایک ایکسیڈنٹ ہوگیا تھا…. اس وجہ سے دیر ہوئی پہنچنے میں…. تو چاچو نے کہا بیٹا کبھی بھی ایسا ہو *نہیں رکنا…*. کیونکہ نہ گھر والے چھوڑتے ہیں نہ پولیس…. الٹا موبائل، گھڑی، والٹ کے چوری کے الزامات بھی لگتے ہیں….
یہاں پڑھنے والے اگر چہ میرے چاچو کی بات کی نفی کریں گے….. لیکن بات وہی ہے یہ سب کہلوانے پر مجبور کرنے والا بھی تو ہمارا معاشرہ ہے… چاچو کو کسی انجان شخص سے زیادہ ظاہر اپنے بھتیجے کی ہی فکر ہوگی…..
شاید ہم سب کے خود غرضانہ، منافقانہ، رویوں نے آج اس نہج پر پہنچادیا کہ ہم لوگ نہ مدد کرتے ہیں اور کوئی کرے تو بھی اس کے ساتھ ایسا کرتے ہیں کہ وہ دوبارہ نہیں کرے
پھر بھی امید ہے کہ اللہ کرم فرمائے ہم. سب پر، ہماری سوچوں پر، ہمارے کرداروں پر…..
آمین

تحریر: در صدف ایمان

Comments

comments

اپنا تبصرہ بھیجیں