ہومیو پیتھک طریقہ علاج کیا ہے ؟؟

جرمنی کے شہر مائیسن میں پیدا ہونے والا سیموئیل ہانیمن ہومیو پیتھک طریقہ علاج کا موجد مانا جاتا ہے جس نے مختلف بیماریوں کے علاج کیلئے جڑی بوٹیوں سے ہومیو پیتھک طریقہ علاج دریافت کیا – اسیموئیل بذات خود ایلو پیتھک ڈاکٹر تھا، اس کی اکلوتی بیٹی بیمار ہوئی تو اسکا علاج ایلو پیتھک دواؤں سے کیا گیا مگر دواؤں کے سائیڈ ایفکٹز کے باعث انتقال کر گئی – سیموئیل نے اس کے بعد ایلو پیتھک طریقہ علاج کو خیر باد کہہ دیا اور کوئی اور طریقہ علاج دریافت کرنے کی کوشش میں لگ پڑا اور یوں اس نے ہومیو طریقہ علاج دریافت کرنے میں کامیابی حاصل کی –

سیموئیل نے سنکونا جسے کونین بھی کہا جاتا ہے کے مطالعے سے ایک نئی راہ نکالی – اس نے تندرستی کی حالت میں کونین کو خام حالت میں استعمال کیا جس سے اسے کچھ وقت کے لئے سردی لگناشروع ہوئی اور بخار ہوا جب دوا کا اثر ختم ہوا تو بخار بھی اتر گیا ، اس نے دوبارہ کونین کھائی اسے پھر وہی علامات پیدا ہوئیں دوا کے اثر کے خاتمہ پہ علامات بھی غائب ہو گئیں مزید تحقیق کے بعد سیموئیل نے دنیا کے سامنے کونین کا نیا فلسفہ پیش کیا اس نے بتایا کونین کو بخار اتارنے کے لئے استعمال کیا جاتا ہے لیکن میں کہتا ہوں کونین تندرستی کی حالت میں کھائی جائے تو بخار پیدا بھی کر تی ہے –

سیموئیل نے کونین کو ڈسٹلڈواٹرمیں ڈائلوٹ کیا اورایک اورطاقت بنائی پھر ایک طاقت کو مزید ڈائلوٹ کرتے ہوئے دوسری طاقت میں کونین کو تیار کیا ، اس طرح اس نے چھٹی طاقت میں کونین کو تیارکر کے ملیریا والی علامات میں کونین کو استعمال کرایا تو اس کے استعمال سے ملیریا والی علامات ختم ہو گئیں یوں ہومیو پیتھک ادویات کی تیاری اور تحقیق کا عمل شروع ہوگیا –

ہومیو پیتھک طریقہ علاج دراصل ” Law of Similars ” کے فارمولے پر کام کرتا ہے یعنی اگر کوئی بھی مادہ جو ایک صحت مند شخص میں بیماری کی علامات پیدا کر سکتا ہے تو وہ ہی مادہ ایک بیمار شخص میں ان علامات کا علاج بھی ہو سکتا ہے –

مثال کے طور پر پیاز ایک مادہ ہے جسے کاٹا جائے تو وہ آنکھوں میں پانی لانے اور ناک کے جلنے کا سبب بنتا ہے ، ہومیو پیتھک طریقہ علاج میں اسی پیاز سے پیازکی انہیں خصوصیات کو مد نظر رکھتے ہوئے بخار کی ایسی حالت جس میں آنکھوں سے پانی بہہ رہا ہو اور ناک جل رہی ہوں ( یعنی زکام ، فلو یا نزلہ وغیرہ ) سے دوائی تیار کی جائے گی –

ہومیوپیتھک دوالفاظ سے مل کر بنا جس کے لغوی معنی ” بالمثل طریقہ علاج ” کے ہیں – ادویات استعمال میں آسان اور اثر میں تیز تر ہوتی ہیں عام طور پر یہ تاثر ہے کہ ہومیو پیتھک ادویات نقصان دے نہیں ہوتیں مگر ایسا سمجھنا غلط ہے ، اگر ادویات میں ڈاکٹر کے نسخے کے مطابق پوٹینسی کا خیال نہ رکھا جائے تو یہ نقصان کا سبب بھی بن سکتی ہیں –

Comments

comments

اپنا تبصرہ بھیجیں