5، 10 یا 15 نہیں، ملیے 21 بچوں کی ماں سے

برطانوی خاتون سو ریڈ فورڈ کی عمر 44 سال ہے اور ان کے 48 سالہ شوہر نوئل ہیں جن کے  بچوں کی تعداد غیر معمولی طور پر 21 ہیں اور یہی نہیں اب مستقبل میں ان کے ہاں 22 ویں بچے کی آمد بھی متوقع ہے  جس کے بارے میں خاتون نے خوشی کا اظہار کیا اور اپنا الٹراساؤنڈ ایک انٹرویو کے دوران شیئر کیا۔

فوٹو: بشکریہ ڈیلی میل

یہ جوڑا برطانیہ میں اپنے 21 بچوں کے ساتھ رہائش پذیر ہے اور ان کا کہنا ہے کہ ان کا 2018 میں پیدا ہونے والا ایک بچہ اب اس دنیا میں نہیں ہے۔

21 بچوں کی بناء پر یہ برطانیہ کا سب سے بڑا خاندان کہلاتا ہے، خاتون کا کہنا ہےکہ اب ہمارا ایک اور بچہ بہت جلد دنیا میں آنے والا ہے، ان کے حمل کو ابھی 15 ہفتے ہی ہوئے ہیں اور جوڑے کے اس بچے کی پیدائش اپریل میں متوقع ہے۔

فوٹو: بشکریہ ڈیلی میل

خاتون کا مزید کہنا تھا کہ آخری مرتبہ ہمارے ہاں بیٹی پیدا ہوئی تھی اور اب ہم چاہتے ہیں کہ ہمارا بیٹا پیدا ہو۔

فوٹو: بشکریہ ڈیلی میل

سو اور نوئل ایک کامیاب بیکری چلا رہے ہیں اور وہ اپنے اس بڑے خاندان کے تمام تر اخراجات اسی بیکری سے آنے والی رقم سے اٹھاتے ہیں۔

انہوں نے بتایا کہ انہیں اپنے ایک بچے کے کام کرنے سے تقریباً 220 ڈالر رقم ہفتہ وار حاصل ہوتی ہے جب کہ یہ خاندان 10 بیڈ روم والے گھر میں رہتا ہے جو کہ انہوں نے 2004 میں 3 لاکھ 11 ہزار ڈالر میں خریدا تھا۔

سو اور نوئل کی سب سے بڑی بیٹی کے 3 بچے ہیں جب کہ اس خاندان کے 15 بچے ابھی اسکول جاتے ہیں اور ان کے باقی بچے ابھی چھوٹے ہیں۔

فوٹو: بشکریہ ڈیلی میل

ان کے گھر میں روزانہ ناشتے میں 8.5 کلو دودھ ، 3 لیٹر جوس جب کہ سیریل یعنے دلیہ کے ہر دن 3ڈبے کھائے جاتے ہیں۔

فوٹو: بشکریہ ڈیلی میل

بچوں کے والد کا کہنا ہے کہ اگر ہمارا پورا خاندان ایک ساتھ کہیں چھٹیاں منانے جائے تو یہ سب سے مشکل مرحلہ ہوتا ہے کیونکہ ہر بچے کے سامان کو پیک کر کے یاد دہانی کے لیے اس پر بچے کا نام لگانا پڑتا ہے جب کہ اپنے ساتھ 7 سوٹ کیس رکھنا پڑتے ہیں۔

جوڑے کا اپنے روزمرہ کے کاموں کے حوالے سے کہنا تھا کہ انہیں ہر ہفتے اپنا گھر ٹھیک طرح سے صاف کرنے میں 14 سے 21 گھنٹے لگ جاتے ہیں۔

Comments

comments

اپنا تبصرہ بھیجیں